آٹا ، چینی بحران کے بعد ملک میں قحط کا سماں، مارکیٹوں سےدالیں بھی غائب ہوگئیں

لاہور(نیوز ڈیسک) لاہور میں گراں فروشوں کے خلاف ضلعی انتظامیہ کے چھاپوں کے نتیجے میں دکانوں سے دالیں غائب ہونے لگی اور 100سے زائد اسٹورز مالکان نے سرکاری ریٹس پردالیں فروخت کرنا بند کردیں۔سپر سٹورز ایسوسی ایشن کے مطابق ہم نے تھوک اور ڈی سی ریٹ کے فرق کو ٹھیک کرنے مطالبہ کیا تھا لیکن حکومت پنجاب نے دالوں کے ریٹس بڑھانے کی منظوری تاحال نہ دی، مطالبات تسلیم نہ ہونے پردالوں سبزی و پھل کے کاونٹر بند کردیے۔

ڈی سی لاہور دانش افضال نے حکم دیا ہے کہ تمام اسسٹنٹ کمشنرز دکانوں پر دالوں کی فروخت یقینی بنائیں، حکومت پنجاب کوقیمتوں کے حوالے سے سمری بھجوادی ہے، لیکن اس پر تاحال فیصلہ نہیں ہوا اس لیے دالیں طے شدہ پرانے ریٹس پر فروخت ہونگی۔سپر اسٹورز ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ تھوک سے مہنگی دال کر خرید کر ڈی سی ریٹ پر سستی کیسے بیچیں، اسٹورز مالکان نے نقصان بچنے کیلئے دالیں رکھنا چھوڑ دیں، تھوک کا ریٹ ڈی سی ریٹ سے کم ہونا چاہیے، تھوک سے دالیں مہنگی ملتی ہیں، 50 سے 100 روپے تک فی کلو نقصان اٹھانا پڑتا ہے، ڈی سی لاہور کے ساتھ مزاکرات ہوئے حل نہیں نکل جس پر دالیں بیچنا چھوڑ دیں۔